پی ڈی ایم حکومت میں ادویات کتنی مہنگی ہوئی؟ تفصیلات جانیے

medicine-price 23

پی ڈی ایم کی 16 ماہ کی حکومت میں ایک لاکھ ادویات کی قیمتوں میں 14 سے 30 فیصد اضافہ ہوا سردرد بخار سمیت جان بچانے والی ادویات کی قیمتوں میں اضافہ ہوا پیناڈول گولی کے ایک پتے کی قیمت میں 20 روپے 90 پیسے اضافہ ہوا، شوگر میں استعمال ہونے انسولین 200 روپے مہنگی ہوئی، 16 ماہ میں گلوفیج کی ایک پتے کی قیمت میں 13، گیٹرل گولیوں کے پتے کی قیمت میں 125 روپے اضافہ ہوا، دل کے امراض میں استعمال ہونے والی ایملوکارڈ میں 105 روپے اضافہ ریکارڈ، دل کے امراضِ کاروڈیک کی قیمت میں 100 روپے اضافہ ہوا،جبکہ سرجیکل میں استعمال ہونے والی پائیوڈین کی قیمت میں 60تک جا پہنچی ۔حکومت کسی بھی دوا کی قیمت کو باقاعدہ کنٹرول نہیں کر سکی، میڈیکل سٹور مالکان کا کہنا ہے کہ 16 ماہ کی شہباز شریف حکومت میں ادویات کی مصنوعی قلت سب سے بڑا مسئلہ رہا ، پاکستان میں ادویات کے ڈالر کے مسائل ایل سی کے مسائل کی وجہ سے امپورٹڈ ادویات نایاب رہیں، میڈیکل ڈیوائسز سٹنٹز کنولا اور دیگر ادویات پاکستان میں ناپید ہو چکی ہیں،میڈیکل سٹور حضرات کا کہنا ہے کہ اکثر میڈیسن وہ شارٹ رہتی ہیں جس کی وجہ سے کاروبار میں فرق پڑتا ہے ۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں