پنجاب میں الیکشن، پاک نیوزی لینڈ سیریز کے شیڈول میں تبدیلی کی جا رہی ہے،نجم سیٹھی

Najam-Sethi-pcb1 40

لاہور:پاکستان کرکٹ بورڈ (پی سی بی) کی منیجمنٹ کمیٹی کے سربراہ نجم سیٹھی نے کہا ہے کہ نیوزی لینڈ کیخلاف پاکستان کی ہوم سیریز کے شیڈول میں تبدیلی کی جا رہی ہے، نیوزی لینڈ کے خلاف ہوم سیریز ضرور ہو گی، شیڈول میں تھوڑی بہت تبدیلی پنجاب میں الیکشنز کی وجہ سے ہو رہی ہے۔گزشتہ روز پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے نجم سیٹھی نے کہا کہ پہلے سیریز کراچی سے شروع ہونی تھی پھر لاہور اور راولپنڈی میں ہونا تھی تاہم اب اس میں تھوڑی تبدیلی کی جائے گی۔انہوں نے بتایا کہ آئندہ ہفتے نئے شیڈول کا اعلان کر دیا جائے گا۔ نجم سیٹھی نے پاکستان سپر لیگ (پی ایس ایل) 8 کوکامیاب بنانے کیلئے تمام اداروں کا شکریہ ادا کیا اور بتایا کہ ٹکٹ کی ریکارڈ سیل ہوئی، ڈیجیٹل پر ریٹنگ 10 پر رہی جو آئی پی ایل سے آگے ہے۔نجم سیٹھی نے کہا کہ ان کی کوشش ہے کہ لیگ میں مزید 2 ٹیمیں شامل کی جائیں، ویمن لیگ بھی کرانے کا ارادہ ہے۔انہوں نے کہا کہ دبئی ہونے والے اجلاس میں ایشیا کپ ، ورلڈ کپ اور چیمپئنز لیگ کے بارے میں بات ہوگی، اگر پاکستان ٹیم بھارت گئی تو سکیورٹی کے علاوہ میڈیا کو ساتھ لیجانے کی اجازت مانگی جائے گی۔نجم سیٹھی نے کہا کہ مکی آرتھر سے بات جیت بھی جاری ہے، نیوزی لینڈ کے خلاف ہوم سیریز شیڈولڈ کے مطابق ہوگی، البتہ پنجاب میں الیکشنز کی وجہ سے تھوڑی بہت تبدیلی کی جا رہی ہے۔انہوں نے کہا کہ پی ایس ایل کو قومی اثاثہ قرار دیا جا رہا ہے، غیر ملکی کھلاڑیوں اور غیر ملکی ٹیکنیشنز کا مشکور ہوں، 7 ممالک کے لگ بھگ 200 افراد یہاں موجود تھے، امریکا سے آنے والے براڈ کاسٹنگ سے منسلک ایک شخص نے پی ایس ایل کو کامیاب قرار دیا، ملتان میں بہت سپورٹ ملی ، وہاں لاجسٹک کی مشکل ہوئی، افتتاحی تقریب ملتان میں کرنا بہت مشکل تھا، 7 ایڈیشنز میں یہ تقریب سب سے بہترین تھی، جب میں 22 دسمبر کو آیا تو افتتاحی تقریب کے حوالے سے کچھ نہیں کیا گیا تھا۔نجم سیٹھی نے کہا کہ پی ایس ایل کی برانڈنگ کیلئے ایک لاکھ روپے رکھا گیا تھا جو میری لیے حیران کن تھا، ہم نے ایک ماہ کے اندر تمام کام مکمل کیے، میں خود اس حوالے سے دبئی گیا، فرنچائزز نے بھی پچاس فیصد حصہ ڈالا، ہم نے اس کا بجٹ 10 گنا بڑھایا۔انہوں نے کہا کہ ٹکٹس کی ریکارڈ سیل ہوئی، ڈیجیٹل پر ریٹنگ 10 پر گئی، ہم ڈیجیٹل کے حوالے سے ا?ئی پی ایل سے آگے رہے، ہم 50 کروڑ روپے کے سیلز ٹیکس دیتے ہیں، صوبائی ٹیکس بھی اتنے ہوتے ہیں، پی ایس ایل کی وجہ سے بزنس بڑھتا ہے، یہاں کہا جاتا ہے کہ لوگوں کو تکلیف ہوتی ہے پولیس کو پیسے دیں۔چیئرمین منیجمنٹ کمیٹی نے کہا کہ ایسے ایونٹس پر زیادہ سے زیادہ خرچ کرنا چاہیے، چار وینیوز پر میچز کرانا آسان نہیں تھا، ائیر چیف نے بلا معاوضہ سامان کی ترسیل کیلئے سی 130 دیا، افتتاحی تقریب کے ایک شخص کیلئے ویزہ کا ایشو ہوا تو اداروں نے ہمارے ساتھ تعاون کیا۔انہوں نے کہا کہ ہمیں یقین ہو گیا ہے کہ ہم پی ایس ایل دنیا میں کہیں بھی کرا سکتے ہیں اگر کبھی ضرورت پڑے، ہم تجربہ کار ہو چکے ہیں، امریکا میں کرانے کا مطالبہ ہے، مستقبل میں اس حوالے سے دیکھیں گے۔پاکستان سپر لیگ میں پچز کے حوالے گفتگو کرتے ہوئے نجم سیٹھی نے کہا کہ میرا یہ کہنا تھا کہ پچز ایسی ہوں جس پر رنز بنیں اور بولرز وکٹیں لیں، ہمیں پچز کی امپورٹ پر اربوں لگانے کی ضرورت نہیں، ہم پچز بنا سکتے ہیں، کسی چیئرمین نے کیوریٹرز سے کبھی بات ہی نہیں کی، کروڑوں کی مٹی منگوائی گئی جو کہ پڑی ہوئی ہے۔پی ایس ایل میں مزید ٹیموں کی شمولیت کے حوالے سے نجم سیٹھی نے کہا کہ ’میری کوشش ہو گی کہ مزید دو ٹیمیں شامل کی جائیں، اس حوالے سے فرنچائزز سے بات چیت ہے ان سے مشاورت کریں گے، ماڈل کے حوالے سے بات ہو گی کہ دس برسوں کے بعد کیا کرنا ہے؟ ویمن لیگز کے حوالے سے دو باتیں ہیں، ایک یہ ہے کہ الگ ستمبر میں ہو دوسری رائے یہ ہے پی ایس ایل کے ساتھ ہو ا خراجات کم ہوں۔ ایک رائے یہ کہ ویمن لیگ میں موجودہ فرنچائزز ہی ٹیمیں لیں ، دوسری رائے ہے کہ الگ الگ ہوں، اگر الگ فرنچائزز ہوں تو اس کا رسپانس بھی اچھا ہے، مجھ سے پانچ لوگوں نے ٹیموں کیلئے رابطہ کیا ہے، امریکا سے بھی لوگوں نے دلچسپی ظاہر کی ہے، ویمنز کی پانچ اکیڈمیز بنانے کا ارادہ ہے، یہ ایک بہت بڑا پاتھ وے پروگرام ہو گا۔ پی ایس ایل 8 میں ایڈورٹائزنگ کے حوالے سے گفتگو کرتے ہوئے نجم سیٹھی نے کہا کہ پی ایس بی نے سروگیٹ ایڈورٹائزنگ کی اجازت دی ہوئی ہے، میں نے جائزہ لیاہے، فرنچائز کو لکھ دیا ہے، سب معاہدوں کا جائزہ لیا جائے گا، کوئی کام حکومتی قانون، کلچر اور مذہب کے خلاف نہیں کیا جائے گا چاہے اس کا نقصان ہی کیوں نہ ہو۔انہوں نے کہا کہ آج رات دبئی چلا جاؤں گا، کل سے سے میٹنگز کا آغاز ہو گا، میں نے آفیشل مؤقف کیا ہے، ابھی تبصرہ کرنا مناسب نہیں ہے، قانونی مشاورت بھی کر لی ہے، ایشیا کپ ، ورلڈ کپ اور چیمپئنز ٹرافی کے حوالے سے بات ہو گی، میں نے اپنے طور پر بھی رابطے مکمل کر لیے ہیں۔انہوں نے کہا کہ اداروں اور حکومت سے بات ہوتی رہتی ہے، وہ کرکٹ میں سیاست نہیں لانا چاہتے، وہ ہمیں خود فیصلے کرنے کا کہتے ہیں، اگر ایک دو ممالک سیاست لاتے ہیں تو پھر ہمیں بھی لانا پڑتا ہے، ہم اپنا مؤقف مضبوط انداز میں پیش کریں گے، دیکھتے ہیں دوسروں کا کیا مؤقف ہے اور ہمارے مؤقف کی کون تائید کرتا ہے۔نجم سیٹھی نے کہا کہ افغانستان کے خلاف ایک میچ حوصلہ افزائی کیلئے دیکھوں گا، غیر ملکی کنسلٹنٹس یہاں مہیا کی جانے والی سکیورٹی سے مطمئن ہیں، مشکلات ضرور ہیں لیکن آئندہ برسوں میں ضرور کم ہوں گی۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں