کپتان کا سیاسی پینترا، ن لیگ پریشان، نواز شریف کی وطن واپسی منسوخ، رانا ثنا لندن طلب

لندن:پاکستان مسلم لیگ (ن) کے قائد و سابق وزیر اعظم محمد نواز شریف نے فی الحال فوری وطن واپس نہ آنے کا فیصلہ کرتے ہوئے واضح کیا ہے کہ مریم نواز واپس جا کر کچھ عرصے کے بعد مجھے رپورٹ دینگی تو اس کے بعد وطن واپسی کا فیصلہ کروں گا۔پارٹی ذرائع کے مطابق پنجاب اسمبلی کی تحلیل اور ممکنہ صوبائی انتخابات سے قبل نواز شریف کی وطن واپسی کی قیاس آرائیاں دم توڑ گئیں۔پارٹی کی سینئر قیادت نے موجودہ سیاسی صورتحال میں نواز شریف کی فوری وطن واپسی کی درخواست کی تھی لیکن نواز شریف نے فی الحال فوری وطن واپسی سے صاف انکار کردیا۔نواز شریف نے پارٹی رہنمائوں کو جواب دیا کہ فی الحال موجودہ سیاسی صورتحال میں میرا پاکستان واپس آنا ممکن نہیں، اگلے چند روز میں مریم نواز کی فوری وطن واپسی کا فیصلہ ہوگا، مریم نواز واپس جا کر کچھ عرصے کے بعد مجھے رپورٹ دینگی تو اس کے بعد وطن واپسی کا فیصلہ کروں گا۔نواز شریف نے پارٹی رہنمائوں کو فوری طور پر انتخابات کی تیاری کی ہدایت کرتے ہوئے کہا کہ پارٹی رہنما بھرپور تیاری کے ساتھ انتخابی میدان میں اتریں، تمام تر صورتحال سے مجھے اپ ڈیٹ بھی رکھیں۔دوسری جانب مسلم لیگ (ن) کے قائد محمد نواز شریف نے وفاقی وزیر داخلہ رانا ثنا اللہ کو لندن طلب کر لیا۔ رانا ثنا اللہ کی آئندہ چند روز میں لندن روانگی کا امکان ہے۔ انہیں پنجاب اسمبلی کی تحلیل اور صوبے میں ہونے والے ممکنہ انتخابات کے تناظر میں طلب کیا گیا ہے۔نواز شریف نے رانا ثنا اللہ کو پنجاب کے تمام صوبائی حلقوں کے ممکنہ امیدواروں کی فہرست بھی ساتھ لانے کی ہدایت کی ہے۔اس حوالے سے گفتگو کرتے ہوئے گفتگو کرتے ہوئے وزیر داخلہ رانا ثناء اللہ خاں نے کہا کہ فوری لندن روانگی وزیر اعظم کی ہدایت پر موخر کی گئی اور نگراں حکومت کی تشکیل کے فوری بعد لندن جائوں گا ۔انہوں نے بتایا کہ مریم نواز کی واپسی کا فیصلہ ہو چکا ، نواز شریف بھی جلد آئیں گے ۔رانا ثناء اللہ نے کہا کہ میدان لگے گا تو شیر ہی نظر آئے گا ۔انتخابات ہوں گے تو قوم کا فیصلہ سامنے آجا ئے گا۔

اپنا تبصرہ بھیجیں