سی پیک انرجی انٹرپرائزز کی جانب سے عطیہ 115 ملین روپے سے تجاوز کر گیا

C-pack-enterprises 63

اسلام آباد:پاکستان کے سیلاب متاثرین کیلئے سی پیک انرجی انٹرپرائزز کی جانب سے عطیہ 115 ملین روپے سے تجاوز کر گیا ۔پاکستان میں لاکھوں لوگ اب بھی سیلاب کے نتیجے میں شدید متاثر ہیں جو ”کہیں نہیں جا ر ہے ۔ ضرورت کے وقت سی پیک کے توانائی کے ادار ے مقامی لوگوں کی مدد کے لیے آگے بڑ ھے اور 115 ملین روپے (بشمول خوراک اور سامان) کا ریلیف فراہم کیا ہے۔چائنہ رینیوایبل انرجی انجینئرنگ انسٹی ٹیوٹ نے سیلاب سے نجات میں پاکستان کے لیے سی پیک توانائی کے اداروں کی مدد کے بارے میں تفصیلات شیئر کیں۔ زونرجی نے 12 ملین روپے، ہوننگ شنڈونگ روئی (پاکستان) نے 1.06 ملین روپے کی امداد فراہم کی۔ سٹیٹ گرڈ آف چائنا نے تقریباً 44 ملین روپے اور مٹیاری لاہور ٹرانسمیشن کمپنی نے 3.72 ملین روپے عطیہ کئے۔ چائنا پاور ہب جنریشن کمپنی نے 1.7 ملین روپے، چائنا گیزوبا گروپ انٹرنیشنل انجینئرنگ نے 9.36 ملین روپے اور یو ای پی ونڈ پاور نے 100,000 روپے فراہم کیے ہیں۔ پاور چائنا نے 30.21 ملین روپے کا عطیہ کیا جس میں عطیات کی پانچ کھیپیں تھیں۔ شنگھائی الیکٹرک 8.16 ملین روپے، تین بیچز۔ چائنا مشینری انجینئرنگ کارپوریشن (CMEC) 4.37 ملین روپے، پانچ بیچز دیئے ۔گوادر پرو کے مطابق کچھ کاروباری اداروں نے عطیات کو پاکستان میں مقامی حکومتوں، امدادی فنڈز اور این جی اوز کو منتقل کیا ہے، جنہوں نے پھر انہیں آفت زدہ علاقوں میں سب سے آگے بھیج دیا۔ کچھ لوگ زمین پر راشن تقسیم کر رہے ہیں۔ مثال کے طور پر، زونرجی، چین کے قابل تجدید توانائی کے حل کے گروپ نے بجلی اور زندگی کی ضروریات سے محروم علاقوں کو پورٹیبل شمسی توانائی کے آلات اور خوراک فراہم کی۔ شنگھائی الیکٹرک نے سیلاب سے متاثرہ ملازمین کے خاندانوں کے لیے خیمے، ادویات اور پینے کا پانی بھیجا۔ مٹیاری لاہور ٹرانسمیشن کمپنی نے سیلاب کی وجہ سے ہونے والی بیماریوں سے خبردار کرتے ہوئے مٹیاری کنورٹر سٹیشن کے قریب رہائشیوں کو 2500 امدادی پیکجز اور طبی خدمات فراہم کیں۔ پاور چائنہ ہوا ڈونگ نے اپنے پروجیکٹ کی سائٹس کے آس پاس لوگوں کے لیے کھانا خریدا۔ گوادر پرو کے مطابق درحقیقت جب بھی پاکستان کو کوئی بڑا چیلنج درپیش ہوتا ہے، چینی حکومت، کاروباری ادارے اور عوام مدد فراہم کرنے کے لیے آگے بڑھتے ہیں۔ سیلاب کے حالات میں یہ بات بالکل درست ہے۔ گوادر پرو کے مطابق پاور چائنا دیامر بھاشا ڈیم پراجیکٹ کے قریب دیہات کو شہر سے ملانے والی اہم سڑکیں طوفانی سیلاب سے تباہ ہو گئیں، جس سے مقامی باشندوں کے لیے ضروری امدادی سامان تک رسائی منقطع ہو گئی۔ اس مشکل وقت میں چینی کمپنی نے تباہی کی جگہ کا سروے کرنے کے بعد سڑکوں کے منہدم حصوں کو صاف کرنے اور آبپاشی کی نالیوں کی بنیادوں کو بیک فل کرنے کے لیے ریسکیو ٹیمیں کھدائی کرنے والوں اور دیگر بڑے مکینیکل آلات کے ساتھ بھیجیں۔ چار دن کی مکمل مرمت کے بعد ٹیم نے 8 کلومیٹر طویل سڑک کو صاف کیا اور ”مفلوج” آبپاشی نہروں کی مرمت کی، جس سے گاؤں والوں کو ایک ثانوی آفت سے بچایا گیا۔ گوادر پرو کے مطابق پاور چائنا دیامر باشا پروجیکٹ کے ایک ملازم نے کہا کہ یہ جتنا مشکل ہے، ہمیں اتنی ہی زیادہ ذمہ داریاں اٹھانی ہوں گی۔ ہماری صلاحیت محدود ہو سکتی ہے، لیکن ہم اس ملک کے لیے کچھ کرنے کی کوشش کر رہے ہیں۔ دوست وہ جو مشکل وقت میں کام آئے ۔گوادر پرو کے مطابق سی پیک منصوبوں میں مقامی لوگوں کی بروقت مدد کی ایسی کہانیاں بے شمار ہیں۔ ضلع مانسہرہ کی وادی کاغان جہاں ایس کے ہائیڈرو پاور پراجیکٹ واقع ہے، قراقرم ہائی وے کے کئی حصے جو شمالی پاکستان میں ایک اہم مواصلاتی لائن ہے، موسلا دھار بارشوں اور لاینڈ سلائڈنگ کی وجہ سے منقطع ہو گئے، جس سے مقامی لوگ پھنس کر رہ گئے۔ بروقت ٹریفک کو بحال کرنے اور امدادی سامان کی ہموار نقل و حمل کو یقینی بنانے کے لیے، چینی انجینئرز نے اپنے پاکستانی ہم منصبوں کی مدد کی تاکہ قراقرم ہائی وے کو ملانے والے اوچھر پل اور بیلی پل کی مرمت کی جائے اور سڑک کو صاف کرنے کے لیے مکینیکل آلات فراہم کیے جائیں۔ گوادر پرو کے مطابق پروجیکٹ کے ایک چینی مینیجر نے کہا ہم یہاں تقریباً 15 سال سے کام کر رہے ہیں، اور پاکستان ہمارے لیے دوسرا گھر ہے۔ ہم تباہی کا شکار اپنے آہنی بھائیوں اور بہنوں کے لیے دلی افسوس ہے ، اور ہم ان کی مدد کرنے کے لیے جو کچھ کر سکتے ہیں فراہم کریں گے ۔ گوادر پرو کے مطابق سیلاب کے بعد سے نمٹنے کے لیے پاکستان کی اپیل کے جواب میں چین نے ماہرین کا ایک 11 رکنی وفد سیلاب زدہ علاقوں کا فیلڈ سروے کرنے اور تباہی کے بعد کی تعمیر میں علم اور تجربہ فراہم کرنے کے لیے بھیجا ہے۔ یکم اکتوبر تک چین کی مسلسل امدادی کوششیں 644.1 ملین یوآن ( 90.2 ملین امریکی ڈالر ) سے تجاوز کر چکی ہیں۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں