عمران خان کا ارشد شریف کی ٹارگٹ کلنگ سے متعلق دبنگ بیان

imran-khan-in-peshawar 54

پشاور: چیئرمین پی ٹی آئی اورسابق وزیراعظم عمران خان نے کہا ہے کہ لوگ جو مرضی کہیں مجھے پتا ہے کہ ارشد شریف کی ٹارگٹ کلنگ ہوئی ہے، میں نے ارشد شریف سے کہا تھا کہ ملک سے باہر چلے جائو، خبر ملی تھی کہ ارشد شریف کو مارنے لگے ہیں، لانگ مارچ کیلئے میرا عزم کبھی اتنا تگڑانہیں تھا جتنااب ہوگیا ہے، ارشد شریف پاک فوج کیساتھ کھڑا ہوتا تھا،ان کے پروگرام کور کرتا تھا، مرحوم نے مجھ پربھی کئی بارتنقید کی، وہ بے باک صحافی تھا، جو کسی مافیا کو نہیں بخشتا تھا، جب تک زندہ ہوں ظالموں سے مقابلہ کرتا رہوں گا، انصاف قائم کرنے کیلئے سب کو میرے ساتھ کھڑاہونا ہے۔ منگل کو پشاور میں وکلاء کنونشن سے خطاب کرتے ہوئے عمران خان نے کہا کہ میں نے ارشد شریف سے کہا تھا کہ ملک سے باہر چلے جا، خبر ملی تھی کہ ارشد شریف کو مارنے لگے ہیں، ارشد شریف کے گھرکے باہرگاڑیاں کھڑی ہوتی تھیں۔عمران خان نے کہا کہ لوگ جو مرضی کہیں مجھے پتا ہے کہ ارشد شریف کی ٹارگٹ کلنگ ہوئی ہے مرحوم کی ضمیر کی کوئی قیمت نہ تھا اسی وجہ سے کوئی اسے خرید نہ سکا، ارشد شریف نے جان دے دی، لیکن کسی کے سامنے نہیں جھکا،میں نے ان جیسا دلیر،ایمانداراورمحب وطن صحافی نہیں دیکھا۔سابق وزیراعظم کا کہنا تھا کہ انہوں نے ارشد شریف کو واپس بلانا تھا اور وہی کرنا تھا جو انہوں نے اعظم سواتی اور شہباز گل کے ساتھ کیا تھا، 75سال کے اعظم سواتی کوننگاکرکے تشددکیاگیا، اسلام آباد میں ایک ڈرٹی ہیری آیا ہے جس کو لوگوں کو ننگا کرنے کا شوق ہے، اسے لوگوں کو ننگا کرنے کا کیا شوق ہے؟۔عمران خان کا کہنا تھا کہ اللہ نے نیوٹرل رہنے کی کسی کواجازت نہیں دی، انصاف قائم نہ ہواتوپھرہماریاورجانوروں کے معاشرے میں کوئی فرق نہیں، 30سال کے کرپٹ لوگ حکومت میں آگئے، سرٹیفائیڈ چوروں کیخلاف کوئی بات کرے تو سارے نامعلوم افراد آکر اسے ڈراتے دھمکاتے ہیں۔انھوں نے کہاکہ ارشد شریف ان دو خاندانوں جنہوں نے ملک کو لوٹا ان کو بے نقاب کرتاتھا۔ لانگ مارچ کیلئے میرا عزم کبھی اتنا تگڑانہیں تھا جتنااب ہوگیا ہے۔انہوں نے مزید کہا کہ ارشد شریف پاک فوج کیساتھ کھڑا ہوتا تھا،ان کے پروگرام کور کرتا تھا، مرحوم نے مجھ پربھی کئی بارتنقید کی، وہ بے باک صحافی تھا، جو کسی مافیا کو نہیں بخشتا تھا۔ عمران خان نے کہا کہ جب تک زندہ ہوں ظالموں سے مقابلہ کرتا رہوں گا، انصاف قائم کرنے کیلئے سب کو میرے ساتھ کھڑاہونا ہے، ملک جس مرحلے پرکھڑاہ، یہ سب کیلئے چیلنج ہے۔چیئرمین پی ٹی آئی نے کہا کہ انصاف سے خوشحالی آتی ہے۔ ملک کاآئین اورقانون کمزورکوتحفظ فراہم کرتاہے۔ طاقتور کو این آراو اورکمزورکوجیل بھیجنے والے معاشرے تباہ ہوتے ہیں۔چیئرمین پی ٹی آئی نے کہا کہ ملک اس وقت دوراہے پرکھڑاہے،میں30سال سے جن کیخلاف جنگ لڑرہاہوں وہ آج اکٹھے ہوگئے، ساری قوم کوکہتاہوں میرے ساتھ کھڑے نہ ہوئے توآپ کامستقبل خطرے میں ہے ، مجھے کوئی فرق نہیں پڑتاہے،یہ آپ کے مستقبل کاسوال ہے۔عمران خان کا کہنا تھاکہ جب ایک قوم انصاف کیلئے جدوجہد نہیں کرتی تباہ ہوجاتی ہے، ہمیں وکلا برادری کی سب سے زیادہ ضرورت ہے، انسانی معاشرے میں قانون کیسامنے سب برابر ہوتے ہیں، برطانیہ گیا تو وہاں قانون کی بالا دستی دیکھی لیکن پاکستان میں کبھی بھی قانون کی بالا دستی نہیں دیکھی۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں